Peer o Mureed

Tags

پيرو مريد

مريد ہندی

چشم بينا سے ہے جاری جوئے خوں
علم حاضر سے ہے ديں زار و زبوں

پيررومی

علم را بر تن زنی مارے بود
علم را بر دل زنی يارے بود

مريدہندی

اے امام عاشقان دردمند
ياد ہے مجھ کو ترا حرف بلند

خشک مغز و خشک تار و خشک پوست
از کجا می آيد ايں آواز دوست

دور حاضر مست چنگ و بے سرور
بے ثبات و بے يقين و بے حضور
کيا خبر اس کو کہ ہے يہ راز کيا
دوست کيا ہے ، دوست کی آواز کيا
آہ ، يورپ با فروغ و تاب ناک
نغمہ اس کو کھينچتا ہے سوئے خاک

پير رومی

بر سماع راست ہر کس چير نيست
طعمۂ ہر مرغکے انجير نيست

مريد ہندی

پڑھ ليے ميں نے علوم شرق و غرب
روح ميں باقی ہے اب تک درد و کرب

پير رومی

دست ہر نا اہل بيمارت کند
سوئے مادر آکہ تيمارت کند

مريدہندی

اے نگہ تيری مرے دل کی کشاد
کھول مجھ پر نکتۂ حکم جہاد

پيررومی

نقش حق را ہم بہ امر حق شکن
بر زجاج دوست سنگ دوست زن

مريد ہندی

ہے نگاہ خاوراں مسحور غرب
حور جنت سے ہے خوشتر حور غرب

پيررومی

ظاہر نقرہ گر اسپيد است و نو
دست و جامہ ہم سيہ گردو ازو

مريد ہندی

آہ مکتب کا جوان گرم خوں
ساحر افرنگ کا صيد زبوں

پيررومی

مرغ پر نارستہ چوں پراں شود
طعمۂ ہر گربۂ دراں شود

مريد ہندی

تا کجا آويزش دين و وطن
جوہر جاں پر مقدم ہے بدن

پيررومی

قلب پہلو می زندہ با زر بشب
انتظار روز می دارد ذہب

مريدہندی

سر آدم سے مجھے آگاہ کر
خاک کے ذرے کو مہر و ماہ کر

پيررومی

ظاہرش را پشۂ آرد بچرخ
باطنش آمد محيط ہفت چرخ

مريد ہندی

خاک تيرے نور سے روشن بصر
غايت آدم خبر ہے يا نظر؟

پيررومی

آدمی ديد است ، باقی پوست است
ديد آں باشد کہ ديد دوست است

مريد ہندی

زندہ ہے مشرق تری گفتار سے
امتیں مرتی ہيں کس آزار سے؟

پير رومی

ہر ہلاک امت پيشيں کہ بود
زانکہ بر جندل گماں بردند عود

مريد ہندی

اب مسلماں ميں نہيں وہ رنگ و بو
سرد کيونکر ہو گيا اس کا لہو؟

پيررومی

تا دل صاحبدلے نامد بہ درد
ہيچ قومے را خدا رسوا نہ کرد

مريد ہندی

گرچہ بے رونق ہے بازار وجود
کون سے سودے ميں ہے مردوں کا سود؟

پيررومی

زيرکی بفروش و حيرانی بخر
زيرکی ظن است و حيرانی نظر

مريد ہندی

ہم نفس ميرے سلاطيں کے نديم
ميں فقير بے کلاہ و بے گليم

پير رومی

بندۂ يک مرد روشن دل شوی
بہ کہ بر فرق سر شاہاں روی

مريد ہندی

اے شريک مستی خاصان بدر
ميں نہيں سمجھا حديث جبر و قدر

پيررومی


بال بازاں را سوے سلطاں برد
بال زاغاں را بگورستاں برد

مريد ہندی

کاروبار خسروی يا راہبی
کيا ہے آخر غايت دين نبی ؟

پيررومی

مصلحت در دين ما جنگ و شکوہ
مصلحت در دين عيسی غار و کوہ

مريد ہندی

کس طرح قابو ميں آئے آب و گل
کس طرح بيدار ہو سينے ميں دل ؟

پيررومی

بندہ باش و بر زميں رو چوں سمند
چوں جنازہ نے کہ بر گردن برند

مريد ہندی

سر ديں ادراک ميں آتا نہيں
کس طرح آئے قيامت کا يقيں؟

پير رومی

پس قيامت شو قيامت را ببيں
ديدن ہر چيز را شرط است ايں

مريد ہندی

آسماں ميں راہ کرتی ہے خودی
صيد مہر و ماہ کرتی ہے خودی
بے حضور و با فروغ و بے فراغ
اپنے نخچيروں کے ہاتھوں داغ داغ

پيررومی

آں کہ ارزد صيد را عشق است و بس
ليکن او کے گنجد اندر دام کس

مريد ہندی

تجھ پہ روشن ہے ضمير کائنات
کس طرح محکم ہو ملت کی حيات؟

پير رومی

دانہ باشی مرغکانت برچنند
غنچہ باشی کود کانت برکنند
دانہ پنہاں کن سراپا دام شو
غنچہ پنہاں کن گياہ بام شو

مريد ہندی

تو يہ کہتا ہے کہ دل کی کر تلاش
طالب دل باش و در پيکار باش
جو مرا دل ہے ، مرے سينے ميں ہے
ميرا جوہر ميرے آئينے ميں ہے

پيررومی

تو ہمی گوئی مرا دل نيز ہست
دل فراز عرش باشد نے بہ پست
تو دل خود را دلے پنداشتی
جستجوے اہل دل بگذاشتی

مريد ہندی

آسمانوں پر مرا فکر بلند
ميں زميں پر خوار و زار و دردمند
کار دنيا ميں رہا جاتا ہوں ميں
ٹھوکريں اس راہ ميں کھاتا ہوں ميں
کيوں مرے بس کا نہيں کار زميں
ابلہ دنيا ہے کيوں دانائے ديں؟

پيررومی

آں کہ بر افلاک رفتارش بود
بر زميں رفتن چہ دشوارش بود

مريد ہندی

علم و حکمت کا ملے کيونکر سراغ
کس طرح ہاتھ آئے سوز و درد و داغ

پيررومی

علم و حکمت زايد نان حلال
عشق و رقت آيد از نان حلال

مريد ہندی

ہے زمانے کا تقاضا انجمن
اور بے خلوت نہيں سوز سخن

پير رومی

خلوت از اغيار بايد ، نے ز يار
پوستيں بہر دے آمد ، نے بہار

مريد ہندی

ہند ميں اب نور ہے باقی نہ سوز
اہل دل اس ديس ميں ہيں تيرہ روز

پير رومی

کار مرداں روشنی و گرمی است
کار دوناں حيلہ و بے شرمی است


EmoticonEmoticon