Yeh Peyaam De Gai..

Tags

يہ پيام دے گئی ہے مجھے باد صبح گاہی


يہ پيام دے گئی ہے مجھے باد صبح گاہی
کہ خودی کے عارفوں کا ہے مقام پادشاہی
تری زندگی اسی سے ، تری آبرو اسی سے
جو رہی خودی تو شاہی ، نہ رہی تو روسياہی
نہ ديا نشان منزل مجھے اے حکيم تو نے
مجھے کيا گلہ ہو تجھ سے ، تو نہ رہ نشيں نہ راہی
مرے حلقہ سخن ميں ابھی زير تربيت ہيں
وہ گدا کہ جانتے ہيں رہ و رسم کجکلاہی
يہ معاملے ہيں نازک ، جو تری رضا ہو تو کر
کہ مجھے تو خوش نہ آيا يہ طريق خانقاہی
تو ہما کا ہے شکاری ، ابھی ابتدا ہے تيری
نہيں مصلحت سے خالی يہ جہان مرغ و ماہی
تو عرب ہو يا عجم ہو ، ترا لا الہ الا
لغت غريب ، جب تک ترا دل نہ دے گواہی


EmoticonEmoticon