Yeh Kon Ghazal Khwan Hai...

Tags

يہ کون غزل خواں ہے پرسوز و نشاط انگيز


يہ کون غزل خواں ہے پرسوز و نشاط انگيز
انديشہ دانا کو کرتا ہے جنوں آميز
گو فقر بھی رکھتا ہے انداز ملوکانہ
نا پختہ ہے پرويزی بے سلطنت پرويز
اب حجرہ صوفی ميں وہ فقر نہيں باقی
خون دل شيراں ہو جس فقر کی دستاويز
اے حلقہ درويشاں ! وہ مرد خدا کيسا
ہو جس کے گريباں ميں ہنگامہ رستا خيز
جو ذکر کی گرمی سے شعلے کی طرح روشن
جو فکر کی سرعت ميں بجلی سے زيادہ تيز
کرتی ہے ملوکيت آثار جنوں پيدا
اللہ کے نشتر ہيں تيمور ہو يا چنگيز
يوں داد سخن مجھ کو ديتے ہيں عراق و پارس
يہ کافر ہندی ہے بے تيغ و سناں خوں ريز


EmoticonEmoticon