Akhtar e Subha


                             اختر صبح


ستارہ صبح کا روتا تھا اور يہ کہتا تھا
ملی نگاہ مگر فرصت نظر نہ ملی
ہوئی ہے زندہ دم آفتاب سے ہر شے
اماں مجھی کو تہِ دامن سحر نہ ملی
بساط کيا ہے بھلا صبح کے ستارے کی
نفس حباب کا ، تابندگی شرارے کی
کہا يہ ميں نے کہ اے زيور جبين سحر!
غم فنا ہے تجھے! گنبد فلک سے اتر
ٹپک بلندئ گردوں سے ہمرہ شبنم
مرے رياض سخن کی فضا ہے جاں پرور
ميں باغباں ہوں ، محبت بہار ہے اس کی
بنا مثال ابد پائدار ہے اس کی


EmoticonEmoticon