Shamma o Perwana

شمع و پروانہ


پروانہ تجھ سے کرتا ہے اے شمع پيار کيوں
يہ جان بے قرار ہے تجھ پر نثار کيوں
سيماب وار رکھتی ہے تيری ادا اسے
آداب عشق تو نے سکھائے ہيں کيا اسے؟
کرتا ہے يہ طواف تری جلوہ گاہ کا
پھونکا ہوا ہے کيا تری برق نگاہ کا؟
آزار موت ميں اسے آرام جاں ہے کيا؟
شعلے ميں تيرے زندگی جاوداں ہے کيا؟
غم خانہ جہاں ميں جو تيری ضيا نہ ہو
اس تفتہ دل کا نخل تمنا ہرا نہ ہو
گرنا ترے حضور ميں اس کی نماز ہے
ننھے سے دل ميں لذت سوز و گداز ہے
کچھ اس ميں جوش عاشق حسن قديم ہے
چھوٹا سا طور تو يہ ذرا سا کليم ہے
پروانہ ، اور ذوق تماشائے روشنی
کيڑا ذرا سا ، اور تمنائے روشنی

1 comments so far

This comment has been removed by a blog administrator.


EmoticonEmoticon