Mirza Ghalib

مِرزا غالب


فکر انساں پر تری ہستی سے يہ روشن ہوا
ہے پر مرغ تخيل کی رسائی تا کجا

تھا سراپا روح تو ، بزم سخن پيکر ترا
زيب محفل بھی رہا محفل سے پنہاں بھی رہا

ديد تيری آنکھ کو اس حسن کی منظور ہے
بن کے سوز زندگی ہر شے ميں جو مستور ہے

محفل ہستی تری بربط سے ہے سرمايہ دار
جس طرح ندی کے نغموں سے سکوت کوہسار
تيرے فردوس تخيل سے ہے قدرت کي بہار
تيری کشت فکر سے اگتے ہيں عالم سبزہ وار

زندگی مضمر ہے تيری شوخی تحرير ميں
تاب گويائی سے جنبش ہے لب تصوير ميں

نطق کو سو ناز ہيں تيرے لب اعجاز پر
محو حيرت ہے ثريا رفعت پرواز پر
شاہدِ مضموں تصدق ہے ترے انداز پر
خندہ زن ہے غنچہ دلِی گل شيراز پر

آہ! تو اجڑی ہوئی دِلی ميں آراميدہ ہے
گلشن ويمر ميں تيرا ہم نوا خوابيدہ ہے

لطفِ گويائی ميں تيری ہمسری ممکن نہيں
ہو تخيل کا نہ جب تک فکر کامل ہم نشيں
ہائے! اب کيا ہو گئی ہندوستاں کی سر زميں
آہ! اے نظارہ آموز نگاہ نکتہ بيں

گيسوئے اردو ابھی منت پذير شانہ ہے
شمع يہ سودائی دل سوزی پروانہ ہے

اے جہان آباد ، اے گہوارہ علم و ہنر
ہيں سراپا نالہ خاموش تيرے بام و در
ذرے ذرے ميں ترے خوابيدہ ہيں شمں و قمر
يوں تو پوشيدہ ہيں تيری خاک ميں لاکھوں گہر

دفن تجھ ميں کوئی فخر روزگار ايسا بھی ہے؟
تجھ ميں پنہاں کوئی موتی آبدار ايسا بھی ہے؟


EmoticonEmoticon