Aihad e Tifli By Allama Iqbal

عہدِ طفلی


تو شناسائے خراش عقدئہ مشکِل نہيں
اے گلِ رنگيں ترے پہلو ميں شايد دل نہيں
زيب محفل ہے ، شريک شورش محفل نہيں
يہ فراغت بزم ہستی ميں مجھے حاصل نہيں

اس چمن ميں ميں سراپا سوز و ساز آرزو
اور تيری  زندگانی  بے  گداز  آرزو

توڑ لينا شاخ سے تجھ کو مرا آئيں نہيں
يہ نظر غير از نگاہِ چشم صورت بيں نہيں
آہ! يہ دست جفا جو اے گل ِ رنگيں نہيں
کس طرح تجھ کو يہ سمجھائوں کہ ميں گلچيں نہيں

کام مجھ کو ديدئہ حکمت کے الجھيڑوں سے کيا
ديدئہ بلبل سے ميں کرتا ہوں نظارہ ترا

سو زبانوں پر بھی خاموشی تجھے منظور ہے
راز وہ کيا ہے ترے سينے ميں جو مستور ہے
ميری صورت تو بھی اک برگ رياض طور ہے
ميں چمن سے دور ہوں تو بھی چمن سے دور ہے

مطمئن ہے تو ، پريشاں مثل بو رہتا ہوں ميں
زخمی شمشير ذوق جستجو رہتا ہوں ميں

يہ پريشانی مری سامان جمعيت نہ ہو
يہ جگر سوزی چراغ خانہ حکمت نہ ہو
ناتوانی ہی مری سرمايہ قوت نہ ہو
رشک جام جم مرا آ ينہ حيرت نہ ہو

يہ تلاش متصل شمعِ جہاں افروز ہے
توسن ادراک انساں کو خرام آموز ہے


EmoticonEmoticon