Humdardi By Iqbal

ہمد ر د ی

( ماخوذ از وليم کو پر )

بچوں کے لئے


ٹہنی پہ کسی شجر کی تنہا
بلبل تھا کوئی اداس بيٹھا
کہتا تھا کہ رات سر پہ آئی
اڑنے چگنے ميں دن گزارا
پہنچوں کس طرح آشياں تک
ہر چيز پہ چھا گيا اندھيرا
سن کر بلبل کی آہ و زاری
جگنو کوئی پاس ہی سے بولا
حاضر ہوں مدد کو جان و دل سے
کيڑا ہوں اگرچہ ميں ذرا سا
کيا غم ہے جو رات ہے اندھيری
ميں راہ ميں روشنی کروں گا
اللہ نے دی ہے مجھ کو مشعل
چمکا کے مجھے ديا بنايا
ہيں لوگ وہی جہاں ميں اچھے
آتے ہيں جو کام دُوسرں کے

8 comments


EmoticonEmoticon