Kho Na Ja Is..

Tags

کھو نہ جا اس سحروشام ميں اے صاحب ہوش


کھو نہ جا اس سحروشام ميں اے صاحب ہوش
اک جہاں اور بھی ہے جس ميں نہ فردا ہے نہ دوش
کس کو معلوم ہے ہنگامہ فردا کا مقام
مسجد و مکتب و ميخانہ ہيں مدت سے خموش
ميں نے پايا ہے اسے اشک سحر گاہی ميں
جس در ناب سے خالی ہے صدف کی آغوش
نئی تہذيب تکلف کے سوا کچھ بھی نہيں
چہرہ روشن ہو تو کيا حاجت گلگونہ فروش
صاحب ساز کو لازم ہے کہ غافل نہ رہے
گاہے گاہے غلط آہنگ بھی ہوتا ہے سروش


EmoticonEmoticon