Faqr o Malukiat

Tags

فقر و ملوکيت



فقر جنگاہ ميں بے ساز و يراق آتا ہے
ضرب کاری ہے، اگر سينے ميں ہے قلب سليم
اس کي بڑھتی ہوئی بے باکی و بے تابی سے
تازہ ہر عہد ميں ہے قصہ فرعون و کليم
اب ترا دور بھی آنے کو ہے اے فقر غيور
کھا گئی روح فرنگی کو ہوائے زروسيم

عشق و مستی نے کيا ضبط نفس مجھ پہ حرام
کہ گرہ غنچے کی کھلتی نہيں بے موج نسيم


EmoticonEmoticon