Shakespeare

شيکسپير


شفق صبح کو دريا کا خرام آئينہ
نغمہ شام کو خاموشی شام آئينہ

برگ گل آئنہ عارض زبيائے بہار
شاہد مے کے ليے حجلہ جام آئينہ

حسن آئنہ حق اور دل آئنہ حسن
دل انساں کو ترا حسن کلام آئينہ

ہے ترے فکر فلک رس سے کمال ہستی
کيا تری فطرت روشن تھی مآل ہستی

تجھ کو جب ديدۂ ديدار طلب نے ڈھونڈا
تاب خورشيد ميں خورشيد کو پنہاں ديکھا

چشم عالم سے تو ہستی رہی مستور تری
اور عالم کو تری آنکھ نے عرياں ديکھا

حفظ اسرار کا فطرت کو ہے سودا ايسا
رازداں پھر نہ کرے گی کوئی پيدا ايسا


EmoticonEmoticon