A Baad e Saba (Ghazal)

اے باد صبا! کملي والے سے جا کہيو پيغام مرا


اے باد صبا! کملي والے سے جا کہيو پيغام مرا
قبضے سے امت بيچاري کے ديں بھي گيا، دنيا بھي گئي
يہ موج پريشاں خاطر کو پيغام لب ساحل نے ديا
ہے دور وصال بحر بھي، تو دريا ميں گھبرا بھي گئي!
عزت ہے محبت کي قائم اے قيس! حجاب محمل سے
محمل جو گيا عزت بھي گئي، غيرت بھي گئي ليلا بھي گئي
کي ترک تگ و دو قطرے نے تو آبروئے گوہر بھي ملي
آوارگي فطرت بھي گئي اور کشمکش دريا بھي گئي
نکلي تو لب اقبال سے ہے، کيا جانيے کس کي ہے يہ صدا
پيغام سکوں پہنچا بھي گئي ، دل محفل کا تڑپا بھي گئي


EmoticonEmoticon