Maah e Noo


                                     ماہ نو


ٹوٹ کر خورشيد کی کشتی ہوئی غرقاب نيل
ايک ٹکڑا تيرتا پھرتا ہے روئے آب نيل
طشت گردوں ميں ٹپکتا ہے شفق کا خون ناب
نشتر قدرت نے کيا کھولی ہے فصد آفتاب

چرخ نے بالی چرا لی ہے عروس شام کی
نيل کے پانی ميں يا مچھلی ہے سيم خام کی

قافلہ تيرا رواں بے منت بانگ درا
گوش انساں سن نہيں سکتا تری آواز پا
گھٹنے بڑھنے کا سماں آنکھوں کو دکھلاتا ہے تو
ہے وطن تيرا کدھر ، کس ديس کو جاتا ہے تو
ساتھ اے سيارۂ ثابت نما لے چل مجھے
خار حسرت کی خلش رکھتی ہے اب بے کل مجھے
نور کا طالب ہوں ، گھبراتا ہوں اس بستی ميں ميں
طفلک سيماب پا ہوں مکتب ہستی ميں ميں


EmoticonEmoticon