Zindagi Insaan Ki (Ghazal)



زندگي انساں کي اک دم کے سوا کچھ بھي نہيں 
دم ہوا کي موج ہے ، رم کے سوا کچھ بھي نہيں 
گل تبسم کہہ رہا تھا زندگاني کو مگر 
شمع بولي ، گريہء غم کے سوا کچھ بھي نہيں 
راز ہستي راز ہے جب تک کوئي محرم نہ ہو 
کھل گيا جس دم تو محرم کے سوا کچھ بھي نہيں 
زائران کعبہ سے اقبال يہ پوچھے کوئي 
کيا حرم کا تحفہ زمزم کے سوا کچھ بھي نہيں


EmoticonEmoticon