Zamana Dekhay ga Jab(Ghazal)

زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا
مري خموشي نہيں ہے ، گويا مزار ہے حرف آرزو کا

جو موج دريا لگي يہ کہنے ، سفر سے قائم ہے شان ميري
گہر يہ بولا صدف نشيني ہے مجھ کو سامان آبرو کا

نہ ہو طبيعت ہي جن کي قابل ، وہ تربيت سے نہيں سنورتے
ہوا نہ سرسبز رہ کے پاني ميں عکس سرو کنار جو کا

کوئي دل ايسا نظر نہ آيا نہ جس ميں خوابيدہ ہو تمنا
الہي تيرا جہان کيا ہے نگار خانہ ہے آرزو کا

کھلا يہ مر کر کہ زندگي اپني تھي طلسم ہوس سراپا
جسے سمجھتے تھے جسم خاکي ، غبار تھا کوئے آرزو کا

اگر کوئي شے نہيں ہے پنہاں تو کيوں سراپا تلاش ہوں ميں
نگہ کو نظارے کي تمنا ہے، دل کو سودا ہے جستجو کا

چمن ميں گلچيں سے غنچہ کہتا تھا ، اتنا بيدرد کيوں ہے انساں
تري نگاہوں ميں ہے تبسم شکستہ ہونا مرے سبو کا

رياض ہستي کے ذرے ذرے سے ہے محبت کا جلوہ پيدا
حقيقت گل کو تو جو سمجھے تو يہ بھي پيماں ہے رنگ و بو کا

تمام مضموں مرے پرانے ، کلام ميرا خطا سراپا
ہنر کوئي ديکھتا ہے مجھ ميں تو عيب ہے ميرے عيب جو کا

سپاس شرط ادب ہے ورنہ کرم ترا ہے ستم سے بڑھ کر
ذرا سا اک دل ديا ہے ، وہ بھي فريب خوردہ ہے آرزو کا

کمال وحدت عياں ہے ايسا کہ نوک نشتر سے تو جو چھيڑے
يقيں ہے مجھ کو گرے رگ گل سے قطرہ انسان کے لہو کا

گيا ہے تقليد کا زمانہ ، مجاز رخت سفر اٹھائے
ہوئي حقيقت ہي جب نماياں تو کس کو يارا ہے گفتگو کا

جو گھر سے اقبال دور ہوں ميں ، تو ہوں نہ محزوں عزيز ميرے
مثال گوہر وطن کي فرقت کمال ہے ميري آبرو کا


EmoticonEmoticon