Tazmeen Bshair Aneesi Shamlo

 تضمين بر شعر انيسی شاملو

ہميشہ صورت باد سحر آوارہ رہتا ہوں
محبت ميں ہے منزل سے بھی خوشتر جادہ پيمائی

دل بے تاب جا پہنچا ديار پير سنجر ميں
ميسر ہے جہاں درمان درد نا شکيبائی

ابھی نا آشنائے لب تھا حرف آرزو ميرا
زباں ہونے کو تھی منت پذير تاب گويائی

يہ مرقد سے صدا آئی ، حرم کے رہنے والوں کو
شکايت تجھ سے ہے اے تارک آئين آبائی

ترا اے قيس کيونکر ہوگيا سوز دروں ٹھنڈا
کہ ليلی ميں تو ہيں اب تک وہی انداز ليلائی

نہ تخم 'لا الہ' تيری زمين شور سے پھوٹا
زمانے بھر ميں رسوا ہے تری فطرت کی نازائی

تجھے معلوم ہے غافل کہ تيری زندگی کيا ہے
کنشتی ساز، معمور نوا ہائے کليسائی

ہوئی ہے تربيت آغوش بيت اللہ ميں تيری
دل شوريدہ ہے ليکن صنم خانے کا سودائی
''

وفا آموختی از ما، بکار ديگراں کر دی
ربودی گوہرے از ما نثار ديگراں کر دی


EmoticonEmoticon