Insaan

                                 انسان



قدرت کا عجيب يہ ستم ہے!
انسان کو راز جو بنايا
راز اس کی نگاہ سے چھپايا
بے تاب ہے ذوق آگہی کا
کھلتا نہيں بھيد زندگی کا
حيرت آغاز و انتہا ہے
آئينے کے گھر ميں اور کيا ہے
ہے گرم خرام موج دريا
دريا سوئے سجر جادہ پيما
بادل کو ہوا اڑا رہی ہے
شانوں پہ اٹھائے لا رہی ہے
تارے مست شراب تقدير
زندان فلک ميں پا بہ زنجير
خورشيد ، وہ عابد سحر خيز
لانے والا پيام بر خيز
مغرب کی پہاڑيوں ميں چھپ کر
پيتا ہے مے شفق کا ساغر
لذت گير وجود ہر شے
سر مست مے نمود ہر شے
کوئی نہيں غم گسار انساں
کيا تلخ ہے روزگار انساں


EmoticonEmoticon