Aik Shaam

                               ايک شام



( دريائے نيکر 'ہائيڈل برگ ' کے کنارے پر )

خاموش ہے چاندنی قمر کی
شاخيں ہيں خموش ہر شجر کی
وادی کے نوا فروش خاموش
کہسار کے سبز پوش خاموش
فطرت بے ہوش ہو گئی ہے
آغوش ميں شب کے سو گئی ہے
کچھ ايسا سکوت کا فسوں ہے
نيکر کا خرام بھی سکوں ہے
تاروں کا خموش کارواں ہے
يہ قافلہ بے درا رواں ہے
خاموش ہيں کوہ و دشت و دريا
قدرت ہے مراقبے ميں گويا
اے دل! تو بھی خموش ہو جا
آغوش ميں غم کو لے کے سو جا


EmoticonEmoticon