Hamala

اے ہمالہ! اے فصيل کشور ہندوستاں
چومتا ہے تيری پيشانی کو جھک کر آسماں
تجھ ميں کچھ پيدا نہيں ديرينہ روزی کے نشاں
تو جواں ہے گردش شام و سحر کے درمياں

ايک جلوہ تھا کليم طور سينا کے ليے
تو تجلی ہے سراپا چشم بينا کے ليے

امتحان ديدئہ ظاہر ميں کوہستاں ہے تو
پاسباں اپنا ہے تو ، ديوار ہندستاں ہے تو
مطلع اول فلک جس کا ہو وہ ديواں ہے تو
سوئے خلوت گاہ دل دامن کش انساں ہے تو

برف نے باندھی ہے دستار فضيلت تيرے سر
خندہ زن ہے جو کلاہ مہر عالم تاب پر

تيری عمر رفتہ کی اک آن ہے عہد کہن
واديوں ميں ہيں تری کالی گھٹائيں خيمہ زن
چوٹياں تيری ثريا سے ہيں سرگرم سخن
تو زميں پر اور پہنائے فلک تيرا وطن

چشمہ دامن ترا آئینہ سیال ہے
دامن موج ہوا جس کے ليے رومال ہے

ابر کے ہاتھوں ميں رہوار ہوا کے واسطے
تازيانہ دے ديا برق سر کہسار نے
اے ہمالہ کوئی بازی گاہ ہے تو بھی ، جسے
دست قدرت نے بنايا ہے عناصر کے ليے

ہائے کيا فرط ِ طرب ميں جھومتا جاتا ہے ابر
فيل بے زنجير کی صورت اڑا جاتا ہے ابر

جنبش موج نسيم صبح گہوارہ بنی
جھومتی ہے نشہ ہستی ميں ہر گل کی کلی
يوں زبان برگ سے گويا ہے اس کی خامشی
دستِ گل چيں کی جھٹک ميں نے نہيں ديکھی کبھی

کہہ رہی ہے ميری خاموشی ہي افسانہ مرا
کنج خلوت خانہ قدرت ہے کاشانہ مرا

آتی ہے ندی فراز کوہ سے گاتی ہوئی
کوثر و تسنيم کی موجوں کی شرماتی ہوئی
آئینہ سا شاہد قدرت کو دکھلاتی ہوئی
سنگِ رہ سے گاہ بچتی ، گاہ ٹکراتی ہوئی

چھيڑتی جا اس عراق ِ دل نشيں کے ساز کو
اے مسافر! دل سمجھتا ہے تری آواز کو

ليلی شب کھولتی ہے آ کے جب زلف رسا
دامن دل کھينچتی ہے آبشاروں کی صدا
وہ خموشی شام کی جس پر تکلم ہو فِدا
وہ درختوں پر تفکر کا سماں چھايا ہوا

کانپتا پھرتا ہے کيا رنگِ شفق کہسار پر
خوشنما لگتا ہے يہ غازہ تِرے رخسار پر

اے ہمالہ! داستاں اس وقت کی کوئی سنا
مسکن آبائے انساں جب بنا دامن ترا
کچھ بتا اس سيدھی سادی زندگی کا ماجرا
داغ جس پر غازئہ رنگ تکلف کا نہ تھا


ہاں دکھا دے اے تصور! پھر وہ صبح و شام تو
دوڑ پيچھے کی طرف اے گردش ايام تو



Hamala In Roman Urdu



ae hamala! ae faseel e kishwar e hindustan 
choomta ha teri paishani ko jhuk ker aasman


 tujh mein kuch paida nahin derina rozee ke nishan
tu jawan hai gardish e sham o saher ke darmiyan


aik jalwa tha kaleem e toor e seena ke liye
tu tajalli hai sarapa chasm e beena ke liye


imtihan e didah zahir mein kohistan hai tu
pasban apna hai tu, dewar e hindustan hai tu


matla e awwal falak jis ka ho vo diwan hai tu
suay khilwat gah e dil daman kash e insan hai tu


barf ne bandhi hai dastar e fazilat tere sar
khanda zan hai kalah e meher e aalam taab par


teri umar e rafta ki ek aan hai ehad e kuhan
wadiyon mein hain teri kali ghataen khema zan


chotiyan teri surayya se hain sargaram e sukhan
tu zameen per aur pehna e falak tera watan


chasma e daman tera aaeena siyyal hai
daman e mouj e hawa jis ke liye rumal hai


abar ke hathon mein rahwar e hawa ke waste
taziyana de diya barq e sar e kohsar ne


Ae hamala koi bazi gah hai tu bhi, jise
dast e qudrat ne banaya hai aanasir ke liye


haaye kya firat e tarab mein jhoomta jata hai abar
feel e be zanjeer ki surat ura jata hai abar


junbish e mouj e naseem e subah gehwara bani
jhoomti hai nasha e husti mein har gul ki kali


yun zuban e berg se goya hai iss ke khamshi
dast e gulcheen ki jhatak mein ne nahin dekhi kabhi


keh rahi hai meri khamoshi hi afsana mera
kunj e khalwat khana e qudrat hai kashana mera




aati hai nadi faraz e koh se gati huwi
kausar o tasneem ki moujon ko sharmati huwi


aaeena sa shahid e qudrat ko dikhlati huwi
sang e reh se gah bachti gah takrati huwi


chairti ja iss iraq e dil nasheen ke saaz ko
ae musafir dil samjhta hai teri awaz ko


laila e shab kholti hai aa ke jab zulf e rasa
daman e dil khenchti hai aabsharon ke sada


vo khamoshi sham ki jis per takalum ho fida
vo darkhton per tafakkur ka saman chaya huwa


kanpta phirta hai kya rang e shafaq kohsar per
khushnuma lagta hai ye ghazah tere rukhsar per


ae hamala! dastan uss waqt ki koi suna
maskan e aabaay insan jab bana daman tera
  
kuch bata uss seedhi sadi zindagi ka majra
dagh jis par ghaza rang e takalluf ka na tha


Haan dikha de ae tasawwar phir woh subah o sham tu
dorh piche ki taraf ae ghardish e ayyam tu
ئ


EmoticonEmoticon