Gul e Puzmarda


گل پژمردہ


کس زباں سے اے گل پژمردہ تجھ کو گل کہوں
کس طرح تجھ کو تمنائے دل بلبل کہوں
تھی کبھی موج صبا گہوارۂ جنباں ترا
نام تھا صحن گلستاں ميں گل خنداں ترا

تيرے احساں کا نسيم صبح کو اقرار تھا
باغ تيرے دم سے گويا طبلۂ عطار تھا

تجھ پہ برساتا ہے شبنم ديدۂ گرياں مرا
ہے نہاں تيری اداسی ميں دل ويراں مرا
ميری بربادی کی ہے چھوٹی سی اک تصوير تو
خوا ب ميری زندگی تھی جس کی ہے تعبير تو
ہمچو نے از نيستان خود حکايت می کنم
بشنو اے گل! از جدائی ہا شکايت می کنم


EmoticonEmoticon